این اے 154: الیکشن ٹریبیونل کا فیصلہ کچھ دیر میں

این اے 154: الیکشن ٹریبیونل کا فیصلہ کچھ دیر میں
این اے 154: الیکشن ٹریبیونل کا فیصلہ کچھ دیر میں پاکستان کے صوبہ پنجاب کے شہر ملتان کا الیکشن ٹریبیونل حلقہ این اے 154 میں مبینہ الیکشن دھاندلی سے متعلق پاکستان تحریک انصاف کے جہانگیر ترین کی درخواست پر فیصلہ کچھ دیر میں سنائے گا۔

الیکشن ٹربیونل نے دونوں فریقین کے وکلا کے دلائل مکمل ہونے کے بعد 20 اگست کو پٹیشن پر اپنا فیصلہ محفوظ کر لیا تھا۔

الیکشن کمیشن نے2013 میں ہونے والے عام انتخابات میں جہانگیر ترین کے حریف آزاد امید وار محمد صدیق خان بلوچ کو کامیاب قرار دیا تھا۔

جہانگیر ترین نے اپنی پٹیشن میں بلوچ پر جعلی ڈگری اور پولنگ کے دوران دھاندلی کا الزام لگایا تھا۔

یاد رہے کہ لاہور میں قائم الیکشن ٹریبیونل نے سپیکر قومی اسمبلی ایاز صادق کے انتخاب کو کالعدم قرار دیتے ہوئے حلقہ این اے 122 میں دوبارہ الیکشن کرانے کا حکم دیا تھا۔

ایاز صادق نے الیکشن ٹربیونل کے اس فیصلے کو سپریم کورٹ میں چیلنج کرنے کا فیصلہ کیا ہے تاہم اُنھیں ابھی تک الیکشن ٹربیونل کے فیصلے کی مصدقہ کاپی نہیں ملی ہے۔

رکنیت منسوخ کیے جانے کے بعد ایاز صادق کی جگہ قومی اسمبلی کے ڈپٹی سپیکر مرتضی جاوید عباسی قائم مقام سپیکر کی ذمہ داریاں سنبھالیں گے۔

Comments are closed.